ظلم کرتے ہوئے وہ شخص لرزتا ہی نہیں

شارب مورانوی

ظلم کرتے ہوئے وہ شخص لرزتا ہی نہیں

شارب مورانوی

MORE BYشارب مورانوی

    ظلم کرتے ہوئے وہ شخص لرزتا ہی نہیں

    جیسے قہار کے معنی وہ سمجھتا ہی نہیں

    جتنا بھی بانٹ سکو بانٹ دو اس دولت کو

    علم اک ایسا خزانہ ہے جو گھٹتا ہی نہیں

    ہندو ملتا ہے مسلمان بھی عیسائی بھی

    لیکن اس دور میں انسان تو ملتا ہی نہیں

    میرا بچہ بھی الگ فکر کا مالک نکلا

    جو کبھی نقش قدم دیکھ کے چلتا ہی نہیں

    اس قدر سرد مزاجی ہے مسلط ہم پر

    کوئی بھی بات ہو اب خون ابلتا ہی نہیں

    کس طرح اترے گا آنگن میں قمر خوشیوں کا

    غم کا سورج کبھی دیوار سے ڈھلتا ہی نہیں

    مٹ نہیں سکتا کبھی دامن تاریخ سے داغ

    خون مظلوم کبھی رائیگاں ہوتا ہی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY