مجھ کو گردش میں سنبھالا ہوتا

الہڑبیکانیری

مجھ کو گردش میں سنبھالا ہوتا

الہڑبیکانیری

MORE BYالہڑبیکانیری

    مجھ کو گردش میں سنبھالا ہوتا

    تو اگر چاہنے والا ہوتا

    گانٹھ لیتا جو سیاسی رشتے

    میرا رتبہ بھی نرالا ہوتا

    آستینیں ہی بضد تھیں ورنہ

    میں نے سانپوں کو نہ پالا ہوتا

    تاجداروں کی تواریخ میں کیوں

    ہم فقیروں کا حوالہ ہوتا

    دھوپ محلوں نے گچا لی الھڑؔ

    کیسے کٹیا میں اجالا ہوتا

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazals Dushyant Ke Baad (Pg. 75)
    • Author : Dixit Dankauri
    • مطبع : Vani Prakashan (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے