نفس نفس میں ہیں تاریکیاں کہاں رکھ دوں

اکھلیش تیواری

نفس نفس میں ہیں تاریکیاں کہاں رکھ دوں

اکھلیش تیواری

MORE BYاکھلیش تیواری

    نفس نفس میں ہیں تاریکیاں کہاں رکھ دوں

    میں اک چراغ اجالے کہاں کہاں رکھ دوں

    ہے اک زمانے کی ان سے مری شناسائی

    تمہیں کہو کہ یہ تنہائیاں کہاں رکھ دوں

    اڑا رہے ہیں سب اپنی اڑان کے قصے

    میں اپنے ٹوٹے پروں کے بیاں کہاں رکھ دوں

    چھپاؤں شاہجہاں سے میں خود کو لاکھ مگر

    جو تاج گڑھتی ہیں وہ انگلیاں کہاں رکھ دوں

    حسد کی ریت ہے حد نگاہ تک اکھلیشؔ

    میں یہ خلوص کی کشتی کہاں کہاں رکھ دوں

    مأخذ :
    • کتاب : Hindustani Gazle.n

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY