سہارے کے لیے تنکا بہت ہے

سوامی شیاما نند سرسوتی روشن

سہارے کے لیے تنکا بہت ہے

سوامی شیاما نند سرسوتی روشن

MORE BYسوامی شیاما نند سرسوتی روشن

    سہارے کے لیے تنکا بہت ہے

    محبت کا تو اک لمحہ بہت ہے

    بھلے ہی منہ سے ہم کچھ بھی نہ بولیں

    مگر دل سے تجھے چاہا بہت ہے

    بہت ہی کم تجھے دیکھا ہے ہم نے

    مگر سچ ہے تجھے سوچا بہت ہے

    سنے گا وہ اگر دل سے کہو گے

    اسے اک بار ہی کہنا بہت ہے

    بہت کچھ جاننا باقی ہے روشنؔ

    یوں اپنے آپ کو جانا بہت ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Ghazals Dushyant Ke Baad (Pg. 43)
    • Author : Dixit Dankauri
    • مطبع : Vani Prakashan (2003)
    • اشاعت : 2003

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے