سمندر پار کر کے اب پرندے گھر نہیں آتے

سوہن راہی

سمندر پار کر کے اب پرندے گھر نہیں آتے

سوہن راہی

MORE BY سوہن راہی

    سمندر پار کر کے اب پرندے گھر نہیں آتے

    اگر واپس بھی آتے ہیں تو لے کر پر نہیں آتے

    مری آنکھوں کی دونوں کھڑکیاں خاموش رہتی ہیں

    کہ اب ان سے سخن کرنے مرے منظر نہیں آتے

    سنہری دھوپ کی چادر وہ پورے چاند کی راتیں

    ہم ان میں قید رہتے ہیں کبھی باہر نہیں آتے

    مرے آنگن کی چھتری کے کبوتر خوب ہیں لیکن

    چلے جاتے ہیں واپس تو کبھی مڑ کر نہیں آتے

    تمہارے شہر کے موسم ہمارے شہر میں راہیؔ

    سنہری دھوپ کی لے کر کبھی چادر نہیں آتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY