یہ دل ہے، یہ جگر ہے، یہ کلیجہ

ہری چند اختر

یہ دل ہے، یہ جگر ہے، یہ کلیجہ

ہری چند اختر

MORE BYہری چند اختر

    محترمہ بیگم حمیدہ سلطان صاحبہ جنرل سکریٹری انجمن ترقی اردو (دہلی) کے ہاں علی منزل میں ایک شعری نشست میں مرحوم حضرت نوح ناروی غزل سنارہے تھے۔ ردیف تھی ’کیا کیا‘ نوح صاحب نے اپنی مخصوص تحت اللفظ طرز ادا میں جب یہ مصرعہ پڑھا،

    یہ دل ہے، یہ جگر ہے، یہ کلیجہ

    تو پنڈت ہری چند اختر بے ساختہ کہہ اٹھے،

    قصائی لایا ہے سوغات کیا کیا

    سامعین تو کیا خود حضرت نوح کا ہنستے ہنستے برا حال تھا۔

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے