ہاں نفس باد سحر شعلہ فشاں ہو

مرزا غالب

ہاں نفس باد سحر شعلہ فشاں ہو

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    ہاں نفس باد سحر شعلہ فشاں ہو

    اے دجلۂ خوں چشم ملائک سے رواں ہو

    اے زمزمۂ قم لب عیسی پہ فغاں ہو

    اے ماتمیان شہ مظلوم کہاں ہو

    بگڑی ہے بہت بات بنائے نہیں بنتی

    اب گھر کو بغیر آگ لگائے نہیں بنتی

    تاب سخن و طاقت غوغا نہیں ہم کو

    ماتم میں شہ دیں کے ہیں سودا نہیں ہم کو

    گھر پھونکنے میں اپنے محابا نہیں ہم کو

    گر چرخ بھی جل جائے تو پروا نہیں ہم کو

    یہ خرگہ نہ پایۂ جو مدت سے بپا ہے

    کیا خیمۂ شبیر سے رتبے میں سوا ہے

    کچھ اور ہی عالم ہے دل و چشم و زباں کا

    کچھ اور ہی نقشا نظر آتا ہے جہاں کا

    کیسا فلک اور مہر جہاں تاب کہاں کا

    ہو گا دل بیتاب کسی سوختہ جاں کا

    اب صاعقہ و مہر میں کچھ فرق نہیں ہے

    گرتا نہیں اس رو سے کہو برق نہیں ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib (Pg. 474)
    • Author : kalidas gupta raza
    • مطبع : Sakar Publishers Private Limited (1988)
    • اشاعت : 1988

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے