بہشت بریں

حاجی لق لق

بہشت بریں

حاجی لق لق

MORE BYحاجی لق لق

    خدا سے دعا بہر دنیا کریں گے

    غلط ہے کہ ہم فکر عقبیٰ کریں گے

    بڑے ہو کے کونسل میں جایا کریں گے

    تو دل سے یہ اقرار پکا کریں گے

    کہ جنت کی خاطر نہ جھگڑا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    بہشت بریں کیا ہے بس ایک گلشن

    فرشتوں کا دیدار حوروں کے درشن

    ہر اک جنتی بے ہنر اور بے فن

    نہ بزم ادب اور نہ ریڈیو سٹیشن

    کہاں ہم غزل اپنی گایا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    نہ ساماں وہاں کوئی وجہ مسرت

    نہ عشق و محبت کی واں کوئی صورت

    ڈنر سوٹ کس وقت پہنا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    فقط خشک ملا اور اللہ اکبر

    پرے زاہدوں کے سر حوض کوثر

    نہ گھوڑا نہ گاڑی نہ ٹانگہ نہ موٹر

    نہ شملہ پہاڑی نہ سنما نہ تھیٹر

    کہاں شام اپنی گزارا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    سنا ہے وہاں شاعری بھی نہ ہوگی

    اور عشاق کی بے کلی بھی نہ ہوگی

    بلا سے جو یہ دل لگی بھی نہ ہوگی

    ستم تو یہ ہے لانڈری بھی نہ ہوگی

    کہاں اپنے کپڑے دھلایا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    وہاں ہوں گے بے کار قرطاس و خامہ

    نہ پیغام الفت نہ مکتوب نامہ

    نہ ناول نویسی نہ شعر اور ڈرامہ

    فقط ہاتھ میں ہوگا اک پائجامہ

    سئیں گے اسے اور ادھیڑا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    زباں بھی وہاں ہوگی اہل عرب کی

    یہاں ہم نے سیکھی ہے انگلش غضب کی

    زباں کیسے حوروں کی سمجھا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    حقیقت کو جنت کی ہم خاک جانیں

    کہ اتنی ہی باتیں ہیں جتنی زبانیں

    مگر آپ اس بات کو راست مانیں

    نہ ہوں گی کہیں ساڑھیوں کی دکانیں

    یہ مانا کہ جنت میں ہے خوب رونق

    کھلے ہیں چنبیلی گلاب اور زنبق

    مگر ہوگا اپنے لیے وہ لق و دق

    نہیں ہوں گے اس میں کبھی حاجی لق لقؔ

    فرشتے ہمیں کب ہنسایا کریں گے

    بہشت بریں لے کے ہم کیا کریں گے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY