ایک چہلم پر

راجہ مہدی علی خاں

ایک چہلم پر

راجہ مہدی علی خاں

MORE BYراجہ مہدی علی خاں

    جمیلہ اب اٹھو نہ آنسو بہاؤ

    نہیں وقت رونے کا دریاں بچھاؤ

    یہ دنیا ہے فانی گیا جانے والا

    وہ رونے سے واپس نہیں آنے والا

    نہ بیکار اب تم دہائی مچاؤ

    اٹھو اپنے گھر میں صفائی کراؤ

    معزز معزز جو آئیں گے مہماں

    بہت ناک اور بھوں چڑھائیں گی اماں

    تم ان کے لیے جلد حقے منگاؤ

    میاں بھاگ کر چائے لپٹن کی لاؤ

    وہ سب آ کے اظہار ماتم کریں گے

    وہ بیٹھک میں روئیں گے چائے پئیں گے

    سنائیں گے مرحوم کے وہ فسانے

    کہ لب بولنے کو دیے ہیں خدا نے

    دلہن نے اتارا نہ تھا سرخ جوڑا

    کہ دولہا نے دنیائے فانی کو چھوڑا

    بہت خوبصورت بہت نیک تھا وہ

    ہزاروں جوانوں میں بس ایک تھا وہ

    نماز اک بھی ہرگز نہ اس نے قضا کی

    شب و روز کرتا عبادت خدا کی

    جدھر دیکھتے ہیں ادھر غم ہی غم ہے

    کریں اس کا جتنا بھی ماتم وہ کم ہے

    نہ رو رو کے بے حال ہو اے دلہن تو

    نہ کر اس قدر آہ و رنج و محن تو

    وہ جنت میں خوشیاں منائے گا مت رو

    وہ حوروں سے اب دل لگائے گا مت رو

    جمیلہ خدا کی قسم مسکرا دے

    تری بے قراری نہ ہم کو رلا دے

    رضیہ ذرا گرم چاول تو لانا

    ذکیہ ذرا ٹھنڈا پانی پلانا

    بہت خوبصورت بہت نیک تھا وہ

    ہزاروں جوانوں میں بس ایک تھا وہ

    جمیلہ مجھے روغنی نان دینا

    وہ فرنی اٹھانا وہ پکوان دینا

    جدائی میں اس کے ہوا دل دوانا

    کہ لگتا ہے اچھا نہ پینا نہ کھانا

    منگاؤ پلاؤ ذرا اور خالہ

    بڑھانا ذرا قورمے کا پیالہ

    جدھر دیکھتے ہیں ادھر غم ہی غم ہے

    کریں اس کا جتنا بھی ماتم وہ کم ہے

    وہ ننھی کے زردے میں کشمش ہے تھوڑی

    بہت دیر سے مانگتی ہے نگوڑی

    وہ ٹکڑا جگر کا تھا آنکھوں کا تارا

    ہمیں اپنی اولاد سے بھی تھا پیارا

    پڑا ہے پلاؤ میں گھی ڈالڈے کا

    خدا تو ہی حافظ ہے میرے گلے کا

    دلہن سے کہو آہ اتنی نہ روئے

    بے چاری نہ بے کار میں جان کھوئے

    اری بوٹیاں تین سالن میں تیرے

    یہ چھچھڑا لکھا تھا مقدر میں میرے

    بہت خوبصورت بہت نیک تھا وہ

    ہزاروں جوانوں میں بس ایک تھا وہ

    دلہن گھر میں چورن اگر ہے تو لانا

    نہیں تو ذرا کھاری بوتل منگانا

    نہ کر بین اتنے نہ رو اتنا پیاری

    ہمارے کلیجے پہ چلتی ہے آری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY