غالبؔ دلی میں

ساغر خیامی

غالبؔ دلی میں

ساغر خیامی

MORE BYساغر خیامی

    غالبؔ نے کی یہ عرض خداوند ذو الجلال

    جنت سے کچھ دنوں کے لیے کر مجھے بحال

    مہ وش مرے کلام کو سازوں پہ گائے ہیں

    قسمت نے بعد مرنے کے کیا دن دکھائے ہیں

    شاعر جو منحرف تھے وہ مرعوب ہو گئے

    ایواں جو میرے نام سے منسوب ہو گئے

    خادم کا اس ادارے سے رشتہ ہے باہمی

    اک بار میں بھی دیکھ لوں غالب اکادمی

    ہر شخص کے حضور میں پھیلائے ہات تھا

    نا قدریوں کے دور میں فدوی حیات تھا

    حکم خدا ہوا کہ ذرا جلد جائیے

    دنیا کو جا کے پھر سے ذرا دیکھ آئیے

    ساغرؔ بہ احترام خدا کے وکیل نے

    دلی میں لا کے چھوڑ دیا جبرئیل نے

    اک ساتھ دو بسیں جو بھنا بھن گزر گئیں

    حوروں نے جو سنواری تھیں زلفیں بکھر گئیں

    کاندھے سے کاندھا مار کے مہ وش نکل گیا

    اولی سے ثانی شعر کا میٹر بدل گیا

    بیٹھے جو بس میں اور ہوئے ہوش باختہ

    جنت کی سمت اڑتی نظر آئی فاختہ

    جھٹکے سے بس کے ریشمی پوشاک پھٹ گئی

    جھرمٹ میں لڑکیوں کے تھے اور جیب کٹ گئی

    دیکھا جو ہپیوں کو تو دل شاد ہو گئے

    سمجھے کہ قیدی قید سے آزاد ہو گئے

    خفیہ پولس بھی عادت و اطوار دیکھ کر

    پیچھے لگی تھی جبہ و دستار دیکھ کر

    غالبؔ کی جو نگاہ ادھر سے ادھر گئی

    اردو کی اک کتاب نظر سے گزر گئی

    اردو کے زر نگار کسی آفتاب نے

    طوطے کو ''ت'' سے لکھا تھا خانہ خراب نے

    غالبؔ یہ سمجھے یار کہیں پوپلا نہ ہو

    تصنیف کرنے والا کہیں توتلا نہ ہو

    یہ داغ دھل سکیں گے نہ اشکوں کے دھوئے سے

    تا عمر میں نے لکھا ہے طوطے کو ''ط'' سے

    واللہ بے بلائے براتی سے ہو گئی

    غالبؔ کی بھینٹ ایک صحافی سے ہو گئی

    بولے بڑے وقار سے غالبؔ ہے میرا نام

    جنت سے ساتھ آئے ہیں جبریل ذی مقام

    بولے کہ کتنے لوگوں پہ غالبؔ کا بھوت ہے

    ہیں آپ واقعی کوئی اس کا ثبوت ہے

    بے نور جو چراغ ہیں وہ آفتاب ہیں

    کس کس کو ہم بتائیں کہ غالبؔ جناب ہیں

    واللہ جھوم جائے گی دنیا حضور کی

    جنت سے ساتھ لایا ہوں تصویر حور کی

    تصویر دیکھ کر کہا سنئے بڑے میاں

    اس شکل کی ملیں گی ہزاروں ہی لڑکیاں

    حوروں سے گاہ گاہ جو خط میں نے پائے ہیں

    جبریل اپنے ساتھ وہ سب لے کے آئے ہیں

    خط پڑھ کے بولے واہ یہی خط ہیں کیا جناب

    جن میں نہ سوز و ساز نہ شکوے نہ اضطراب

    یہ خط بھی پڑھ کے دیکھیے جو میرے پاس ہیں

    حوروں سے بڑھ کے لڑکیاں یاں ایڈوانس ہیں

    ہر آرزوئے دل کو بہ تصویر لکھتی ہیں

    ماتا پتا کو پاؤں کی زنجیر لکھتی ہیں

    آئے تھے چار روز کو جلدی گزر گئے

    غالبؔ وفور شرم سے دو دن میں مر گئے

    پوچھا خدا نے حال تو غالبؔ نے یہ کہا

    جنت سے اب نہ جائے گا یہ بندۂ خدا

    جینا زمانے والوں نے دشوار کر دیا

    پہچاننے سے بھی مرے انکار کر دیا

    آئی صدائے حق کہ یہی بند و بست ہیں

    تیرے وطن کے لوگ تو مردہ پرست ہیں

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY