جھوٹ ہے دل نہ جاں سے اٹھتا ہے (ردیف .. ')

محمد یوسف پاپا

جھوٹ ہے دل نہ جاں سے اٹھتا ہے (ردیف .. ')

محمد یوسف پاپا

MORE BYمحمد یوسف پاپا

    جھوٹ ہے دل نہ جاں سے اٹھتا ہے

    یہ دھواں درمیاں سے اٹھتا ہے

    رات بھر دھونکنے پہ مشکل سے

    ''شعلہ اک صبح یاں سے اٹھتا ہے''

    مار لاتا ہے جوتیاں دو چار

    ''جو ترے آستاں سے اٹھتا ہے''

    ہم ڈنر کھا کے اس طرح اٹھے

    ''جیسے کوئی جہاں سے اٹھتا ہے''

    جل گیا کون میرے ہنسنے پر

    ''یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے''

    میرا محبوب پانچ من کا ہے

    ''اور مجھ ناتواں سے اٹھتا ہے''

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY