نوا ہے ہم نوا کوئی نہیں ہے

محمد یوسف پاپا

نوا ہے ہم نوا کوئی نہیں ہے

محمد یوسف پاپا

MORE BYمحمد یوسف پاپا

    نوا ہے ہم نوا کوئی نہیں ہے

    مگر میری خطا کوئی نہیں ہے

    کہا اٹھلا کے اس نے آئیے نا

    یہاں میرے سوا کوئی نہیں ہے

    حسینوں نے بنائی ہے وہ درگت

    مجھے پہچانتا کوئی نہیں ہے

    لگے ہیں کام سے لائن میں سارے

    کسی کو دیکھتا کوئی نہیں ہے

    دبانا شرط ہے بجتے ہیں سارے

    کھلونا بے صدا کوئی نہیں ہے

    ہر اک منہ تک رہا ہے دوسرے کا

    کسی سے بولتا کوئی نہیں ہے

    یہاں جتنے ہیں اپنے باپ کے ہیں

    تمہارے باپ کا کوئی نہیں ہے

    لیے گھومت ہے بلبل چونچ میں گل

    اسے اب پوچھتا کوئی نہیں ہے

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY