پھول اور کانٹا

راجہ مہدی علی خاں

پھول اور کانٹا

راجہ مہدی علی خاں

MORE BYراجہ مہدی علی خاں

    جھٹپٹے کے وقت شیشم کے درختوں کے تلے

    مل رہی تھی جب ہوا مسرور شاخوں سے گلے

    جب زمین خلد منظر کیف سے معمور تھی

    شام کی دیوی محبت کے نشے میں چور تھی

    شہر کی ویراں سڑک پر مجھ کو اک لڑکی ملی

    نیلگوں ملبوس میں مورت چھپی تھی نور کی

    ساتھ اپنے دھول اڑائے جس طرح موج ہوا

    جس طرح سے پھول کے ساتھ ایک کانٹا ہو لگا

    تھام کر اس مہ لقا کا عطر سے آلودہ ہاتھ

    نوجواں بھی آ رہا تھا ایک اس کے ساتھ ساتھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے