اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا

میر تقی میر

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا

    چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا

    امیدوار وعدۂ دیدار مر چلے

    آتے ہی آتے یارو قیامت کو کیا ہوا

    کب تک تظلم آہ بھلا مرگ کے تئیں

    کچھ پیش آیا واقعہ رحمت کو کیا ہوا

    اس کے گئے پر ایسے گئے دل سے ہم نشیں

    معلوم بھی ہوا نہ کہ طاقت کو کیا ہوا

    بخشش نے مجھ کو ابر کرم کی کیا خجل

    اے چشم جوش اشک ندامت کو کیا ہوا

    جاتا ہے یار تیغ بکف غیر کی طرف

    اے کشتۂ ستم تری غیرت کو کیا ہوا

    تھی صعب عاشقی کی بدایت ہی میرؔ پر

    کیا جانیے کہ حال نہایت کو کیا ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : MIRIYAAT - Diwan No- 1, Ghazal No- 0005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY