ابھی تو میں جوان ہوں

حفیظ جالندھری

ابھی تو میں جوان ہوں

حفیظ جالندھری

MORE BY حفیظ جالندھری

    ہوا بھی خوش گوار ہے

    گلوں پہ بھی نکھار ہے

    ترنم ہزار ہے

    بہار پر بہار ہے

    کہاں چلا ہے ساقیا

    ادھر تو لوٹ ادھر تو آ

    ارے یہ دیکھتا ہے کیا

    اٹھا سبو سبو اٹھا

    سبو اٹھا پیالہ بھر

    پیالہ بھر کے دے ادھر

    چمن کی سمت کر نظر

    سماں تو دیکھ بے خبر

    وہ کالی کالی بدلیاں

    افق پہ ہو گئیں عیاں

    وہ اک ہجوم مے کشاں

    ہے سوئے مے کدہ رواں

    یہ کیا گماں ہے بد گماں

    سمجھ نہ مجھ کو ناتواں

    خیال زہد ابھی کہاں

    ابھی تو میں جوان ہوں

    عبادتوں کا ذکر ہے

    نجات کی بھی فکر ہے

    جنون ہے ثواب کا

    خیال ہے عذاب کا

    مگر سنو تو شیخ جی

    عجیب شے ہیں آپ بھی

    بھلا شباب و عاشقی

    الگ ہوئے بھی ہیں کبھی

    حسین جلوہ ریز ہوں

    ادائیں فتنہ خیز ہوں

    ہوائیں عطر بیز ہوں

    تو شوق کیوں نہ تیز ہوں

    نگار ہائے فتنہ گر

    کوئی ادھر کوئی ادھر

    ابھارتے ہوں عیش پر

    تو کیا کرے کوئی بشر

    چلو جی قصہ مختصر

    تمہارا نقطۂ نظر

    درست ہے تو ہو مگر

    ابھی تو میں جوان ہوں

    یہ گشت کوہسار کی

    یہ سیر جوئے بار کی

    یہ بلبلوں کے چہچہے

    یہ گل رخوں کے قہقہے

    کسی سے میل ہو گیا

    تو رنج و فکر کھو گیا

    کبھی جو بخت سو گیا

    یہ ہنس گیا وہ رو گیا

    یہ عشق کی کہانیاں

    یہ رس بھری جوانیاں

    ادھر سے مہربانیاں

    ادھر سے لن ترانیاں

    یہ آسمان یہ زمیں

    نظارہ ہائے دل نشیں

    انہیں حیات آفریں

    بھلا میں چھوڑ دوں یہیں

    ہے موت اس قدر قریں

    مجھے نہ آئے گا یقیں

    نہیں نہیں ابھی نہیں

    ابھی تو میں جوان ہوں

    نہ غم کشود و بست کا

    بلند کا نہ پست کا

    نہ بود کا نہ ہست کا

    نہ وعدۂ الست کا

    امید اور یاس گم

    حواس گم قیاس گم

    نظر سے آس پاس گم

    ہمہ بجز گلاس گم

    نہ مے میں کچھ کمی رہے

    قدح سے ہمدمی رہے

    نشست یہ جمی رہے

    یہی ہما ہمی رہے

    وہ راگ چھیڑ مطربا

    طرب فزا، الم ربا

    اثر صدائے ساز کا

    جگر میں آگ دے لگا

    ہر ایک لب پہ ہو صدا

    نہ ہاتھ روک ساقیا

    پلائے جا پلائے جا

    ابھی تو میں جوان ہوں

    The fragrance wafts o’er the dew

    As flowers bloom, in every hue

    A thousand melodies fill the air

    As spring is here, in bridal wear

    It’s time for cheer, bring out the wine

    Come back, the moment is divine

    Come fill the cup, don’t turn away

    Do not demur, do not delay

    Do cast your eye upon the spring

    The scene’s a dream upon a wing

    As evening falls, dark clouds appear

    Across the skies, from far and near

    Wine lovers will always have their say

    As to the taverns, they wend their way

    Off with the skeptic look, my man

    For I’m not naïve, nor weak nor van

    Heaven can wait, as can piety

    For I’m still young, so let me be

    Yes, there’s talk of God, of fear

    Of salvation that’s never near

    Redemption, and the need to know

    The after life, where souls will go

    But man of God, do hark my word

    Is not your contention absurd

    Tell me dear man, hand on heart

    Can love and beauty stand apart?

    When joy and fragrance fill the air

    And lissome beauties, tall and fair

    Bewitching smiles, do lie in wait

    How can our passions ever abate

    Sensuous glances, full of grace

    Entice one into their embrace

    Guiles of love, and passion’s sway

    What mortal man can stay away?

    Okay, to cut the story short

    Your point of view, your kindly thought

    I may agree with, I may see

    But I’m still young, so let me be..

    To walk along the mountain side

    Or trek the streams at eventide

    To hear the nightingales in song

    And blooming roses, all along

    And then to chance upon your love

    And see all worries, gloom dissolve

    I guess it’s written in our stars

    Tears or joy, what shall be ours..

    These tales of love, these songs of yore

    Are ones we have all heard before

    Some speak of youths full of flair

    And others may merely be hot air

    These skies, these meadows evergreen

    Are scenes that no one has ever seen

    Bounty in joy, calming in strife

    They are the essence of our life

    A life that’s short, that’s so finite

    And so every breath holds delight

    But is the end ever so nigh

    No, no, not now, how can I die

    I’ve long to go, I’ve much to see

    For I’m still young, so let me be..

    No bondage, nor freedom shall remain

    No rise, no fall, no wax nor wane

    No past, no present, no despair

    No vows, no promises, no care

    Hope and despair, both beguiled

    With past and future reconciled

    All sense, all logic shall now depart

    There’s just the wine, and the heart

    Come let the wine flow, let’s rejoice

    Oh nightingale, where is your voice

    Do sing of joy, draw out our pain

    Let just the cup, the ale remain..

    Let every voice sing out as one

    Drink on, the joy has just begun

    A drink, a drink, don’t you see

    For I’m still young, so let me be…

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ملکہ پکھراج

    ملکہ پکھراج

    نامعلوم

    نامعلوم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ابھی تو میں جوان ہوں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites