کون دیکھے گا

مجید امجد

کون دیکھے گا

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    جو دن کبھی نہیں بیتا وہ دن کب آئے گا

    انہی دنوں میں اس اک دن کو کون دیکھے گا

    اس ایک دن کو جو سورج کی راکھ میں غلطاں

    انہی دنوں کی تہوں میں ہے کون دیکھے گا

    اس ایک دن کو جو ہے عمر کے زوال کا دن

    انہیں دنوں میں نمویاب کون دیکھے گا

    یہ ایک سانس جھمیلوں بھری جگوں میں رچی

    اس اپنی سانس میں کون اپنا انت دیکھے گا

    اس اپنی مٹی میں جو کچھ امٹ ہے مٹی ہے

    جو دن ان آنکھوں نے دیکھا ہے کون دیکھے گا

    میں روز ادھر سے گزرتا ہوں کون دیکھتا ہے

    میں جب ادھر سے نہ گزروں گا کون دیکھے گا

    دو رویہ ساحل دیوار اور پس دیوار

    اک آئنوں کا سمندر ہے کون دیکھے گا

    ہزار چہرے خود آرا ہیں کون جھانکے گا

    مرے نہ ہونے کی ہونی کو کون دیکھے گا

    تڑخ کے گرد کی تہ سے اگر کہیں کچھ پھول

    کھلے بھی، کوئی تو دیکھے گا کون دیکھے گا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کون دیکھے گا نعمان شوق

    مآخذ:

    • Book: Kulliyaat-e-majiid Amjad (Pg. 454)
    • Author: Majiid Amjad
    • مطبع: Farid Book Depot (p) Ltd. (2011)
    • اشاعت: 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY