مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

فیض احمد فیض

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

فیض احمد فیض

MORE BY فیض احمد فیض

    INTERESTING FACT

    With this poem, Faiz’s focus changes from traditional Urdu poetry to “poetry with purpose”, poetry with social conscience pursuing social causes. And Faiz admitted it, before the start of this poem, with a quote from a Persian poet, Nizami: “Dil-e-bufro-khatm, jaan-e-khareedun” ( “I have sold my heart and bought a soul”)

    مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

    میں نے سمجھا تھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات

    تیرا غم ہے تو غم دہر کا جھگڑا کیا ہے

    تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات

    تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے

    تو جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے

    یوں نہ تھا میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے

    اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

    راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

    Do Not Ask of Me, My Love

    ان گنت صدیوں کے تاریک بہیمانہ طلسم

    ریشم و اطلس و کمخاب میں بنوائے ہوئے

    جا بہ جا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں جسم

    خاک میں لتھڑے ہوئے خون میں نہلائے ہوئے

    Do not ask of me, my love,

    that love I once had for you.

    There was a time when

    life was bright and young and blooming,

    and your sorrow was much more than

    any other pain.

    Your beauty gave the spring everlasting youth;

    your eyes, yes your eyes were everything,

    all else was vain.

    While you were mine, I thought, the word was mine.

    Though now I know that it was not reality,

    that's the way I imagined it to be;

    for there are other sorrow in the world than love,

    and other pleasures, too.

    Woven in silk and stain and brocade,

    those dark and brutal curses of countless centuries:

    bodies bathed in blood, smeared with dust,

    sold from market-place to market-place,

    bodies risen from the cauldron of disease

    pus dripping from their festering sores-

    my eyes must also turn to these,

    You're beautiful still, my love

    but I am helpless too;

    for there are other sorrow in the world than love,

    and other pleasures too.

    Do not ask of me, my love,

    the love I once had for you!

    جسم نکلے ہوئے امراض کے تنوروں سے

    پیپ بہتی ہوئی گلتے ہوئے ناسوروں سے

    لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے

    اب بھی دل کش ہے ترا حسن مگر کیا کیجے

    اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

    راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

    مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نور جہاں

    نور جہاں

    سیما سہگل

    سیما سہگل

    زہرہ سہگل

    زہرہ سہگل

    فیض احمد فیض

    فیض احمد فیض

    نامعلوم

    نامعلوم

    رادھکا چوپڑا

    رادھکا چوپڑا

    شبنم مجید

    شبنم مجید

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    فریحہ پرویز

    فریحہ پرویز

    رجنی پلوی

    رجنی پلوی

    آصف رضا

    آصف رضا

    نامعلوم

    نامعلوم

    ٹینا ثانی

    ٹینا ثانی

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    بشری صادق

    بشری صادق

    RECITATIONS

    نور جہاں

    نور جہاں

    فہد حسین

    فہد حسین

    فیض احمد فیض

    فیض احمد فیض

    نور جہاں

    مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ نور جہاں

    مآخذ:

    • Book: Nuskha Hai Wafa (Pg. 61)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites