سبا ویراں

ن م راشد

سبا ویراں

ن م راشد

MORE BY ن م راشد

    INTERESTING FACT

    حضرت سلیمان اور ملکۂ سبا کو علامت بنا کر کہی گئی نظم ۔ حضرت سلیمان ایک مشہور بادشاہ اور پیغمبر تھے جن کی حکومت تمام دنیا کے جاندار پر تھی

    سلیماں سر بہ زانو اور سبا ویراں

    سبا ویراں، سبا آسیب کا مسکن

    سبا آلام کا انبار بے پایاں!

    گیاہ و سبزہ و گل سے جہاں خالی

    ہوائیں تشنۂ باراں،

    طیور اس دشت کے منقار زیر پر

    تو سرمہ ور گلو انساں

    سلیماں سر بہ زانو اور سبا ویراں!

    سلیماں سر بہ زانو ترش رو، غمگیں، پریشاں مو

    جہانگیری، جہانبانی، فقط طرارۂ آہو،

    محبت شعلۂ پراں، ہوس بوئے گل بے بو

    ز راز دہر کمتر گو!

    سبا ویراں کہ اب تک اس زمیں پر ہیں

    کسی عیار کے غارت گروں کے نقش پا باقی

    سبا باقی، نہ مہروئے سبا باقی!

    سلیماں سر بہ زانو

    اب کہاں سے قاصد فرخندہ پے آئے؟

    کہاں سے، کس سبو سے کاسۂ پیری میں مے آئے؟

    Deserted Shebal

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ن م راشد

    ن م راشد

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سبا ویراں نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites