طوائف

معین احسن جذبی

طوائف

معین احسن جذبی

MORE BY معین احسن جذبی

    اپنی فطرت کی بلندی پہ مجھے ناز ہے کب

    ہاں تری پست نگاہی سے گلہ ہے مجھ کو

    تو گرا دے گی مجھے اپنی نظر سے ورنہ

    تیرے قدموں پہ تو سجدہ بھی روا ہے مجھ کو

    تو نے ہر آن بدلتی ہوئی اس دنیا میں

    میری پائندگئ غم کو تو دیکھا ہوتا

    کلیاں بے زار ہیں شبنم کے تلون سے مگر

    تو نے اس دیدۂ پر نم کو تو دیکھا ہوتا

    ہائے جلتی ہوئی حسرت یہ تری آنکھوں میں

    کہیں مل جائے محبت کا سہارا تجھ کو

    اپنی پستی کا بھی احساس پھر اتنا احساس

    کہ نہیں میری محبت بھی گوارا تجھ کو

    اور یہ زرد سے رخسار یہ اشکوں کی قطار

    مجھ سے بے زار مری عرض وفا سے بے زار

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    طوائف نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites