نظم

MORE BYزاہد ڈار

    گونجتے گرجتے ہوئے راستے پر ایک عورت

    گھر کی قید سے بھاگی ہوئی عورت

    گرد سے اٹی ہوئی

    تھکی ہوئی اور ڈگمگاتی ہوئی

    اداس اور پریشان

    دنیا کے اجنبی اور بے رحم راستے پر

    ایک عورت

    ماضی سے نالاں اور بیزار

    مستقبل سے بے خبر

    حال کے جنگل میں اکیلی

    ایک عورت

    ہر طرف لوگوں کے ہجوم

    ہر طرف شور ہی شور

    لیکن اس کے اندر خاموشی ہے

    گونجتا گرجتا ہوا سناٹا

    وہ عورت کہاں جائے گی

    کیا وہ ڈر جائے گی

    مآخذ:

    • کتاب : Saweera (magazine-56 (Pg. 54)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY