آئینہ دیکھتا ہوں

اختر ضیائی

آئینہ دیکھتا ہوں

اختر ضیائی

MORE BY اختر ضیائی

    میں جب کبھی

    دو گھڑی

    غور سے آئینہ دیکھتا ہوں

    تو ماضی کے

    الجھے ہوئے روز و شب

    کی شناسا لکیروں

    میں دھندلی تصاویر

    ماحول سے بے خبر بولتی ہیں

    کہ جیسے کسی اجنبی شخص کی

    زندگی کی حسیں ساعتوں

    دل ربا حسرتوں

    اور

    امنگوں کے کوہ ندا کے

    طلسمات خفتہ کے در کھولتی ہیں

    میں حیران سا

    دیر تک سوچتا ہوں

    میں اپنے سراپا کے مٹتے نشانات کو

    حال کے زائچوں سے

    جدا جانتا ہوں

    مجھے وقت کی تیز رفتار سے

    جسم کی ہار سے

    خوف آتا ہے

    پھر بھی

    گھڑی دو گھڑی کے لیے

    آئینہ دیکھتا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : ajnabii musamo.n ki khushboo (Pg. 39)
    • Author : akhtar ziyaa.ii
    • مطبع : zaahid bashiir printer lahore (1992)
    • اشاعت : 1992

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY