اب اور تب

سید محمد جعفری

اب اور تب

سید محمد جعفری

MORE BYسید محمد جعفری

    INTERESTING FACT

    (جب سید محمد جعفری نے انگریزی ادب میں ایم۔اے کرنے کے لیے دوبارہ گورنمنٹ کالج لاہور میں داخلہ لیا اس وقت یہ نظم لکھی)

    نہ پوچھ اے ہم نشیں کالج میں آ کر ہم نے کیا دیکھا

    زمیں بدلی ہوئی دیکھی فلک بدلا ہوا دیکھا

    نہ وہ پہلی سی محفل ہے نہ مینا ہے نہ ساقی ہے

    کتب خانے میں لیکن اب تلک تلوار باقی ہے

    وہی تلوار جو بابر کے وقتوں کی نشانی ہے

    وہی مرحوم بابر یاد جس کی غیر فانی ہے

    زمیں پر لیکچرر کچھ تیرتے پھرتے نظر آئے

    اور ان کی ''گاؤن'' سے کندھوں پہ دو شہ پر نظر آئے

    مگر ان میں مرے استاد دیرینہ بہت کم تھے

    جو دو اک تھے بھی وہ مصروف صد افکار پیہم تھے

    وہ زینے ہی میں ٹکرانے کی حسرت رہ گئی دل میں

    سنا ون وے ٹریفک ہو گئی اوپر کی منزل میں

    اگرچہ آج کل کالج میں واقف ہیں ہمارے کم

    ہمیں دیوار و در پہچانتے ہیں اور ان کو ہم

    بلندی پر الگ سب سے کھڑا ''ٹاور' یہ کہتا ہے

    بدلتا ہے زمانہ میرا انداز ایک رہتا ہے

    فنا تعلیم درس بے خودی ہوں اس زمانے سے

    کہ مجنوں لام الف لکھتا تھا دیوار دبستاں پر

    مگر ''ٹاور'' کی ساعت کے بھی بازو خوب چلتے ہیں

    کبوتر بیٹھ کر سوئیوں پہ وقت اس کا بدلتے ہیں

    اسی مالک کو پھر حلوے کی دعوت پر بلاتے ہیں

    وہ حلوہ خوب کھاتے ہیں اسے بھی کچھ کھلاتے ہیں

    اگر وہ یہ کہے اس میں تو زہریلی دوائی ہے

    مرا دل جانتا ہے اس میں انڈے کی مٹھائی ہے

    پھر اس کے بعد بہر خودکشی تیار ہوتے ہیں

    وہ حلوہ بیچ میں اور گرد اس کے یار ہوتے ہیں

    وہ پوچھے گر کہاں سے کس طرح آیا ہے یہ حلوہ

    تو ڈبہ پیش کر کے کہہ دیا اس کا ہے سب جلوہ

    کسی کنجوس کے کمرے میں جا کر بیٹھ جاتے ہیں

    اور اس کے نام پر ٹک شاپ سے چیزیں منگاتے ہیں

    بچارہ جعفریؔ مدت کے بعد آیا ہے کالج میں

    اضافہ چاہتا ہے اپنی انگریزی کی نالج میں

    ترے سینے پہ جب یاران خوش آئیں کی محفل ہو

    تو اے 'اوول' اسے مت بھول جانا وہ بھی شامل ہو

    مآخذ:

    • کتاب : Teer-e-Neem Kash (Pg. 118)
    • Author : Sayed Mohammad Jafri
    • مطبع : Sang-e-Meel Publications, Lahore (P.k.) (2007)
    • اشاعت : 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY