ابو لہب کی شادی

ن م راشد

ابو لہب کی شادی

ن م راشد

MORE BYن م راشد

    شب زفاف ابو لہب تھی مگر خدایا وہ کیسی شب تھی

    ابو لہب کی دلہن جب آئی تو سر پہ ایندھن گلے میں

    سانپوں کے ہار لائی نہ اس کو مشاطگی سے مطلب

    نہ مانگ غازہ نہ رنگ روغن گلے میں سانپوں

    کے ہار اس کے تو سر پہ ایندھن

    خدایا کیسی شب زفاف ابو لہب تھی

    یہ دیکھتے ہی ہجوم بپھرا بھڑک اٹھے یوں غضب

    کہ شعلے کہ جیسے ننگے بدن پہ جابر کے تازیانے

    جوان لڑکوں کی تالیاں تھی نہ صحن میں شوخ

    لڑکیوں کے تھرکتے پاؤں تھرک رہے تھے،

    نہ نغمہ باقی نہ شادیانے

    ابو لہب نے یہ رنگ دیکھا لگام تھامی لگائی

    مہمیز ابو لہب کی خبر نہ آئی

    ابو لہب کی خبر جو آئی تو سالہا سال کا زمانہ

    غبار بن کر بکھر چکا تھا

    ابو لہب اجنبی زمینوں کے لعل و گوہر سمیٹ کر

    پھر وطن کو لوٹا ہزار طرار و تیز آنکھیں پرانے

    غرفوں سے جھانک اٹھیں ہجوم پیر و جواں کا

    گہرا ہجوم اپنے گھروں سے نکلا ابو لہب کے جلوس

    کو دیکھنے کو لپکا

    ابو لہب اک شب زفاف ابو لہب کا جلا

    پھپھولا خیال کی ریت کا بگولا وہ عشق برباد

    کا ہیولی ہجوم میں سے پکار اٹھی ابو لہب

    تو وہی ہے جس کی دلہن جب آئی تو سر پہ ایندھن

    گلے میں سانپوں کے ہار لائی

    ابو لہب ایک لمحہ ٹھٹھکا لگام تھامی لگائی

    مہمیز ابو لہب کی خبر نہ آئی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ضیا محی الدین

    ضیا محی الدین

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ابو لہب کی شادی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY