ایکسیڈنٹ

مجید امجد

ایکسیڈنٹ

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    INTERESTING FACT

    (نقش، کراچی، مئی جون 1973ء)

    مجھ سے روز یہی کہتا ہے پکی سڑک پر وہ کالا سا داغ جو کچھ دن پہلے

    سرخ لہو کا تھا اک چھینٹا چکنا گیلا چمکیلا چمکیلا

    مٹی اس پہ گری اور میلی سی اک پیڑھی اس پر سے اتری

    اور پھر سیندوری سا اک خاکہ ابھرا

    جو اب پکی سڑک پر کالا سا دھبہ ہے

    پسی ہوئی بجری میں جذب اور جامد ان مٹ

    مجھ سے روز یہی کہتا ہے پکی سڑک پر مسلا ہوا وہ داغ لہو کا

    میں نے تو پہلی بار اس دن

    اپنی رنگ برنگی قاشوں والی گیند کے پیچھے

    یوں ہی ذرا اک جست بھری تھی

    ابھی تو میرا روغن بھی کچھا تھا

    کس نے انڈیل دیا یوں مجھ کو اس مٹی پر

    اوں اوں میں نہیں مٹتا میں تو ہوں اب بھی ہوں

    میں یہ سن کر ڈر جاتا ہوں

    کالی بجری کے روغن میں جینے والے اس معصوم لہو کی کون سنے گا

    ممتا بک بھی چکی ہے چند ٹکوں میں

    قانون آنکھیں میچے ہوئے ہے

    قاتل پہیے بے پہرا ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY