عدم سے پرے

عین تابش

عدم سے پرے

عین تابش

MORE BYعین تابش

    وہ جگمگاتا ہوا شہر میری آنکھوں میں

    تمام رات لرزتا ہے

    آنسوؤں کی طرح

    کبھی سسکتا ہے ٹوٹے ہوئے مناروں میں

    کبھی ٹپکتا ہے آوازۂ بہار کی صورت

    حساب قطرۂ اشک

    آئینہ ستونوں کا

    مرے بجھے ہوئے چہرے کے سامنے آ کر

    پکارتا ہے

    چلے آؤ جان عہد گزشتہ

    وہ سائبان بہت انتظار کرتا ہے

    اجڑ گئی ہے تکلم کی بستیاں

    لیکن

    نشانیاں کئی باقی ہیں

    بجھتی ہوئی بے زباں فضاؤں میں

    حروف و صوت و صدا کے غبار کی صورت

    کشادہ آنگنوں کا سرمئی اندھیرا لرزتا ہے

    کچھ پرندوں کی

    عالم پناہ آنکھوں میں

    وہ جگمگاتا ہوا شہر

    ایک قلعۂ آشفتگاں بھی ہے

    جس سے

    ہر ایک خواب عدم

    سر پٹکتا رہتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : dasht ajab hairanii ka shayar (Pg. 93)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY