ادھوری نظم

عباس تابش

ادھوری نظم

عباس تابش

MORE BYعباس تابش

    اندھیری شام کے ساتھی

    ادھوری نظم سے زور آزما ہیں

    بر سر کاغذ بچھڑنے کی

    سنو ۔۔۔تم سے دل محزوں کی باتیں کہنے والوں کا

    یہی انجام ہوتا ہے

    کہیں سطر شکستہ کی طرح ہیں چار شانے چت

    کہیں حرف تمنا کی طرح دل میں ترازو ہیں

    سنو۔۔۔ ان نیل چشموں سخت جانوں بے زبانوں پر

    جو گزرے گی سو گزرے گی

    مگر میں اک ادھوری نظم کی ہیجان میں کھویا

    تمہیں آواز دیتا ہوں

    کہ تنہا آدمی تخلیق سے عاری ہوا کرتا ہے

    جان من!

    سنو۔۔۔ میرے قریب آؤ

    کہ مجھ کو آج کی رات اک ادھوری نظم پوری کر کے سونا ہے!

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY