ادنیٰ سا باسی

وسیم بریلوی

ادنیٰ سا باسی

وسیم بریلوی

MORE BY وسیم بریلوی

    کل بھی میری پیاس پہ دریا ہنستے تھے

    آج بھی میرے درد کا درماں کوئی نہیں

    میں اس دھرتی کا ادنیٰ سا باسی ہوں

    سچ پوچھو تو مجھ سا پریشاں کوئی نہیں

    کیسے کیسے خواب بنے تھے آنکھوں نے

    آج بھی ان خوابوں سا ارزاں کوئی نہیں

    کل بھی میرے زخم بھنائے جاتے تھے

    آج بھی میرے ہاتھ میں داماں کوئی نہیں

    کل میرا نیلام کیا تھا غیروں نے

    آج تو میرے اپنے بیچے دیتے ہیں

    سچ پوچھو تو میری خطا بس اتنی ہے

    میں اس دھرتی کا ادنیٰ سا باسی ہوں

    مآخذ:

    • Book: Mausam Andar Bahar ke (Pg. 41)
    • Author: Waseem Barelvi
    • مطبع: Maktaba Jamia Ltd. (2007)
    • اشاعت: 2007

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites