اگلی رت کی نماز

شہناز نبی

اگلی رت کی نماز

شہناز نبی

MORE BYشہناز نبی

    میں چاہتی ہوں

    کہ اگلی رت میں ملوں جو تم سے

    جنم جنم کی تھکاوٹوں کے خطوط چہرے سے مٹ چکے ہوں

    قدم قدم اک سفر کی پچھلی علامتیں سب گزر چکی ہوں

    ملال صحرا نوردی پاؤں کے آبلوں میں سمٹ چکا ہو

    مسافرت کی تمام رنجش

    مرے مساموں سے دھل چکی ہو

    کسی بھی پتھر کا کوئی دھبہ

    کسی بھی چوکھٹ کا کوئی قرضہ

    مری جبیں پر رہے نہ لرزاں

    میں چاہتی ہوں کہ اگلی رت میں ملیں جو ہم تم

    دمک رہا ہو یوں میرا دامن

    کہ تم جو چاہو

    نماز پڑھ لو

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Agli rut ki namaz عذرا نقوی

    مآخذ
    • کتاب : azadi ke bad urdu nazm (Pg. 755)
    • Author : shamim hanfi and mazhar mahdi
    • مطبع : qaumi council bara-e-farogh urdu (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY