عہد حاضر کی دل ربا مخلوق

شہریار

عہد حاضر کی دل ربا مخلوق

شہریار

MORE BYشہریار

    زرد بلبوں کے بازوؤں میں اسیر

    سخت بے جان لمبی کالی سڑک

    اپنی بے نور دھندلی آنکھوں سے

    پڑھ رہی ہے نوشتۂ تقدیر

    بند کمروں کے گھپ اندھیروں میں

    بلیاں پی رہی ہیں دودھ کے جام

    ہوٹلوں سینما گھروں کے قریب

    چمچاتی ہوئی نئی کاریں

    اور پنواڑیوں کی دوکانیں

    اور کچھ ٹولیاں فقیروں کی

    پرس والوں کے انتظار میں ہیں

    ادھ پھٹے پوسٹروں کے پیراہن

    آہنی بلڈنگوں کے جسموں پر

    کتنے دل کش دکھائی دیتے ہیں

    بس کی بے حس نشستوں پر بیٹھی

    دن کے بازار سے خریدی ہوئی

    آرزو غم امید محرومی

    نیند کی گولیاں گلاب کے پھول

    کیلے امردو سنترے چاول

    پینٹ گڑیا شمیز چوہے دان

    ایک اک شے کا کر رہی ہے حساب

    عہد حاضر کی دل ربا مخلوق!

    مآخذ
    • کتاب : azadi ke bad urdu nazm (Pg. 635)
    • Author : shamim hanfi and mazhar mahdi
    • مطبع : qaumi council bara-e-farogh urdu (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY