ایسا ہو کہ نا موعود ہو

شہرام سرمدی

ایسا ہو کہ نا موعود ہو

شہرام سرمدی

MORE BYشہرام سرمدی

    وہ غنی ساعت کہ ہم

    شاکی نہ ہوں

    یا یوں کہیں خاکی نہ ہوں

    صد حیف افلاکی نہ ہوں

    کاش اس غنی ساعت میں

    اک کار غنیمت ایسا ہو

    مٹی بدن کی

    روح کی تہذیب سے ہموار ہو

    بے دار ہو

    یہ نقش پائے رفتگاں

    روشن مثال کہکشاں

    سب روح کی تہذیب سے بے دار

    مٹی کی نمو ہے

    عکس ہو ہے

    روح کی تہذیب

    یا اک سلسلہ جس میں عدم کو ہے ثبات

    (اہل زمیں!

    اک نعرہ 'دیوانے کی بات')

    اور اس عدم سے تا ثبات اک بار

    ایسا ہو کہ نا موعود ہو

    یعنی خدا موجود ہو

    خاکی فقط خاکی ہو افلاکی نہ ہو

    اور کوئی بھی شاکی نہ ہو

    مآخذ:

    • کتاب : Na Mau'ud (Pg. 57)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY