عجیب ہوتی ہے یہ محبت

نجمہ شاہین کھوسہ

عجیب ہوتی ہے یہ محبت

نجمہ شاہین کھوسہ

MORE BYنجمہ شاہین کھوسہ

    نصیب والوں کے دل میں جب بھی یہ جاگتی ہے

    تو پہلے نیندیں اجاڑتی ہے

    یہ جھومتی ہے یہ ناچتی ہے

    یہ پھیلتی ہے یہ بولتی ہے

    ہر ایک لمحہ ہر ایک وعدے کو تولتی ہے

    یہ اپنے پیاروں کو مارتی ہے

    صلیب ہوتی ہے یہ محبت

    عجیب ہوتی ہے یہ محبت

    یہ پھیلتی ہے تو پیڑ بنتی ہے چھاؤں کرتی یہ روپ دیتی

    یہ چھاؤں کر کے بھی دھوپ دیتی

    کبھی کبھی تو بس آپ اپنی رقیب ہوتی ہے یہ محبت

    عجیب ہوتی ہے یہ محبت

    لہو کی صورت رگوں میں دوڑے

    یہ خواب بن کر نظر میں ٹھہرے

    سحاب بن کر فلک سے برسے

    اسے جو دریا میں ڈال آؤ تو اک سمندر کا روپ دھارے

    کہیں جو صحرا میں گاڑ آؤ تو پھول بن کر دلوں میں مہکے

    اسے جو دیوار میں بھی چن دو تو ہر کلی میں ہو عکس اس کا

    ہر اک گلی میں ہو رقص اس کا

    عجیب ہوتی ہے یہ محبت

    کسی کسی کو

    کسی کسی کو نصیب ہوتی ہے یہ محبت

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY