اجنبی عورت

ن م راشد

اجنبی عورت

ن م راشد

MORE BYن م راشد

    ایشیا کے دور افتادہ شبستانوں میں بھی

    میرے خوابوں کا کوئی روماں نہیں!

    کاش اک دیوار ظلم

    میرے ان کے درمیاں حائل نہ ہو!

    یہ عمارات قدیم

    یہ خیاباں، یہ چمن، یہ لالہ زار،

    چاندنی میں نوحہ خواں

    اجنبی کے دست غارت گر سے ہیں

    زندگی کے ان نہاں خانوں میں بھی

    میرے خوابوں کا کوئی روماں نہیں!

    کاش اک ''دیوار رنگ''

    میرے ان کے درمیاں حائل نہ ہو!

    یہ سیہ پیکر برہنہ راہرو

    یہ گھروں میں خوبصورت عورتوں کا زہر خند

    یہ گزر گاہوں پہ دیو آسا جواں

    جن کی آنکھوں میں گرسنہ آرزؤں کی لپک

    مشتعل، بے باک مزدوروں کا سیلاب عظیم!

    ارض مشرق، ایک مبہم خوف سے لرزاں ہوں میں

    آج ہم کو جن تمناؤں کی حرمت کے سبب

    دشمنوں کا سامنا مغرب کے میدانوں میں ہے

    ان کا مشرق میں نشاں تک بھی نہیں!

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اجنبی عورت نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY