اجنبی

شاذ تمکنت

اجنبی

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    اب یہ احساس دم فکر سخن ہونے لگا

    اپنی ہی نظموں کا بھولا ہوا کردار ہوں میں

    میں مسافر ہوں بیابان فراموشی کا

    اپنے نقش کف پا سے بھی شناسائی نہیں

    تا بہ پہنائے نظر ریت کے ٹیلوں کا سکوت

    اپنا سایہ بھی یہاں مونس تنہائی نہیں

    تیر بن کر کوئی سناٹے کے دل میں اترے

    کسی مایوس پرندے کی صدائے تنہا

    زخمی آہوئے رمیدہ کی ادائے تنہا

    کاش پل بھر کو اتر آتا خدائے تنہا

    میں کسی آزر گمنام کا بت ہوں شاید

    جس کی قسمت میں کوئی چشم تماشائی نہیں

    اذن فریاد نہیں رخصت گویائی نہیں

    دور اس پار شفق رنگ گپھاؤں سے پرے

    زیر محراب فلک قافلۂ عمر رواں

    تان اڑاتے ہوئے سرمست و جواں گزرا تھا

    مہ نشاں نجم چکاں مہر عناں گزرا تھا

    خوں رلاتا ہے سبک گامئ محمل کا سماں

    اب بھی کوندا سا لپکتا ہے گھٹاؤں سے پرے

    میں بھی اس وقت سر راہ تھا حیراں حیراں

    پا برہنہ نظر آوارہ تن افگار خموش

    درد سے مہر بلب صورت دیوار خموش

    خلش حسرت جاں تھی کہ کوئی پہچانے

    شمع سی دل کے نہاں خانے میں لرزاں لرزاں

    مجھ پہ کیا بیت گئی کون سنے کیا جانے

    چشم خوں بستہ کو آسیب کا مامن سمجھا

    قافلے والوں نے شاید مجھے رہزن سمجھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    Ajnabi - Shaaz Tamkanat نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY