الاؤ

گلزار

الاؤ

گلزار

MORE BY گلزار

    رات بھر سرد ہوا چلتی رہی

    رات بھر ہم نے الاؤ تاپا

    میں نے ماضی سے کئی خشک سی شاخیں کاٹیں

    تم نے بھی گزرے ہوئے لمحوں کے پتے توڑے

    میں نے جیبوں سے نکالیں سبھی سوکھی نظمیں

    تم نے بھی ہاتھوں سے مرجھائے ہوئے خط کھولے

    اپنی ان آنکھوں سے میں نے کئی مانجے توڑے

    اور ہاتھوں سے کئی باسی لکیریں پھینکیں

    تم نے پلکوں پہ نمی سوکھ گئی تھی سو گرا دی

    رات بھر جو بھی ملا اگتے بدن پر ہم کو

    کاٹ کے ڈال دیا جلتے الاؤ میں اسے

    رات بھر پھونکوں سے ہر لو کو جگائے رکھا

    اور دو جسموں کے ایندھن کو جلائے رکھا

    رات بھر بجھتے ہوئے رشتے کو تاپا ہم نے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    گلزار

    گلزار

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین

    فہد حسین

    الاؤ فہد حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY