ازل ۔ابد

عزیز قیسی

ازل ۔ابد

عزیز قیسی

MORE BY عزیز قیسی

    اپنا تو ابد ہے کنج مرقد

    جب جسم سپرد خاک ہو جائے

    مرقد بھی نہیں وہ آخری سانس

    جب قصۂ زیست پاک ہو جائے

    وہ سانس نہیں شکست امید

    جب دامن دل ہی چاک ہو جائے

    امید نہیں بس ایک لمحہ

    جو آتش غم سے خاک ہو جائے

    ہستی کی ابد گہ قضا میں

    کچھ فرق نہیں فنا بقا میں

    خاکستر خواب شعلۂ خواب

    یہ اپنا ازل ہے وہ ابد ہے

    وہ شعلہ تو کب کا مر چکا ہے

    یہ جسم اک نعش بے لحد ہے

    مرتی ہے حیات لمحہ لمحہ

    ہر سانس اک زندگی کی حد ہے

    روحوں کو دوام دینے والو

    جسموں کی سبیل کچھ نکالو

    شعلہ کوئی مستعار دے دو

    یا لاش کو اب مزار دے دو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ازل ۔ابد نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites