بازار

مظفر وارثی

بازار

مظفر وارثی

MORE BYمظفر وارثی

    ایک مجبور کا تن بکتا ہے من بکتا ہے

    ان دکانوں میں شرافت کا چلن بکتا ہے

    سودا ہوتا ہے اندھیروں میں گناہوں کا یہاں

    زندگی نام ہے ہنستی ہوئی آہوں کا یہاں

    زندہ لاشوں کے لیے سرخ کفن بکتا ہے

    جھوٹی الفت کے اشاروں پہ وفا رقص کرے

    چند سکوں کے چھناکے پہ حیا رقص کرے

    حسن معصوم کا بے ساختہ پن بکتا ہے

    بیچ کر اپنا لہو آگ کمائی جائے

    آبرو قوم کی سیجوں پہ لٹائی جائے

    سر بازار ہوس پیار کا فن بکتا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Kalam-e- muzaffar warsi (Pg. 194)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY