برف باری کی رت

فہمیدہ ریاض

برف باری کی رت

فہمیدہ ریاض

MORE BYفہمیدہ ریاض

    یہیں تو کہیں پر

    تمہارے لبوں نے

    مرے سرد ہونٹوں سے برفیلے ذرے چنے تھے

    اسی پیڑ کی چھال پر ہاتھ رکھ کر

    ہم اک دن کھڑے تھے

    یہیں برف باری میں ہم لڑکھڑاتے ہوئے جا رہے تھے

    بہک تازہ بوسوں کی سر میں سمائے

    ہم آغوشی جسم و جاں کے نشے میں

    گئی برف باری کی رت

    اور پگھلتی ہوئی برف بھی بہہ گئی سب

    یہاں کچھ نہیں اب

    کہ ہر شے نئی ہے

    ہٹا کر ردا برف کی گھاس لہرا رہی ہے

    ہری پتیوں کی گھنی ٹہنیوں میں

    ہوا جب چلے تو

    گئے موسموں سے گزرتی

    ہماری ہنسی گونجتی ہے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    برف باری کی رت عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 323)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY