Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بے خبر

آمنہ مفتی

بے خبر

آمنہ مفتی

MORE BYآمنہ مفتی

    نومبر کی زرد رو دھوپ

    کھڑکی کے روزن سے نکل کر

    ہر سو پھیل گئی ہے

    ویران اجاڑ کمرے میں

    خشک موٹی کتابیں ہیں

    نیم شب کی جلی ادھ جلی سگریٹیں

    بوڑھے شاعر کا پرانا چشمہ

    جھریوں بھرے ہاتھوں کی لرزش میں انوکھے الفاظ

    رنگ خوشبو فلک پیمائی کے نئے انداز

    کرم خوردہ میز کے عقب میں بوڑھا شاعر

    پار کر کی موٹی نب سے لکھے جا رہا ہے

    رنگ کی زباں میں خوشبو کے افسانے

    اسے خبر بھی نہیں

    کہ

    نومبر کی زرد رو دھوپ

    اس کی میز پر سرک آئی ہے

    اور

    انگور کی سرد خشک بیل

    کھڑکی کی درز سے

    اسے جھانکتی ہے

    مأخذ:

    پاکستانی ادب-1994 (Pg. 26)

      • ناشر: اکیڈمی ادبیات پاکستان، اسلام آباد
      • سن اشاعت: 1994

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے