کیمرا

ساقی فاروقی

کیمرا

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    ایک امنگ سے

    تنی ہوئی اک پراسرار گلی

    پتی پتی آگ لیے جاتی ہے۔۔۔

    یہ سرکش خون فروش

    اپنے برش کی جنبش سے

    میلی صبح میں

    سرخ رنگ بھر دے گی۔۔۔

    آج نمو کے نیلے زہر سے

    بھری ہوئی بیٹھی ہے۔۔۔

    اوس میں تر کوئی بے گھر تتلی

    نیند پیڑ کی خواب شاخ پر

    پیلے دھانی اندیشوں کی

    دھنک پہن کے سوتی ہے۔۔۔۔۔۔

    اس کہرے میں

    وہ جادو گر بیربہوٹی کرن دکھائی دے

    جو اس کے مجروح پروں سے

    شبنم کی زنجیر توڑ کے

    اسے رہائی دے

    نرم گھاس میں ہوا اڑے

    جو مٹی میں بند مہک

    اپنے ریزر سے کاٹ کاٹ کے

    دھرتی سے آزاد کرے

    منظروں کا صید میں

    ایک اپنے کیمرے میں قید میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites