چند روز اور مری جان فقط چند ہی روز

صوفی تبسم

چند روز اور مری جان فقط چند ہی روز

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    زندگی ہے تو کوئی بات نہیں ہے اے دوست

    زندگی ہے تو بدل جائیں گے یہ لیل و نہار

    یہ شب و روز، مہ و سال گزر جائیں گے

    ہم سے بے مہر زمانے کی نظر کے اطوار

    آج بگڑے ہیں تو اک روز سنور جائیں گے

    فاصلوں، مرحلوں راہوں کی جدائی کیا ہے

    دل ملے ہیں تو نگاہوں کی جدائی کیا ہے

    کلفت زیست سے انسان پریشاں ہی سہی

    زیست آشوب غم مرگ کا طوفاں ہی سہی

    مل ہی جاتا ہے سفینوں کو کنارا آخر

    زندگی ڈھونڈ ہی لیتی ہے سہارا آخر

    اک نہ اک روز شب غم کی سحر بھی ہوگی

    زندگی ہے تو مسرت سے بسر بھی ہوگی

    زندگی ہے تو کوئی بات نہیں ہے اے دوست!

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY