دائرہ

کیفی اعظمی

دائرہ

کیفی اعظمی

MORE BY کیفی اعظمی

    روز بڑھتا ہوں جہاں سے آگے

    پھر وہیں لوٹ کے آ جاتا ہوں

    بارہا توڑ چکا ہوں جن کو

    انہیں دیواروں سے ٹکراتا ہوں

    روز بستے ہیں کئی شہر نئے

    روز دھرتی میں سما جاتے ہیں

    زلزلوں میں تھی ذرا سی گرمی

    وہ بھی اب روز ہی آ جاتے ہیں

    جسم سے روح تلک ریت ہی ریت

    نہ کہیں دھوپ نہ سایہ نہ سراب

    کتنے ارمان ہیں کس صحرا میں

    کون رکھتا ہے مزاروں کا حساب

    نبض بجھتی بھی بھڑکتی بھی ہے

    دل کا معمول ہے گھبرانا بھی

    رات اندھیرے نے اندھیرے سے کہا

    ایک عادت ہے جئے جانا بھی

    قوس اک رنگ کی ہوتی ہے طلوع

    ایک ہی چال بھی پیمانے کی

    گوشے گوشے میں کھڑی ہے مسجد

    شکل کیا ہو گئی مے خانے کی

    کوئی کہتا تھا سمندر ہوں میں

    اور مری جیب میں قطرہ بھی نہیں

    خیریت اپنی لکھا کرتا ہوں

    اب تو تقدیر میں خطرہ بھی نہیں

    اپنے ہاتھوں کو پڑھا کرتا ہوں

    کبھی قرآں کبھی گیتا کی طرح

    چند ریکھاؤں میں سیماؤں میں

    زندگی قید ہے سیتا کی طرح

    رام کب لوٹیں گے معلوم نہیں

    کاش راون ہی کوئی آ جاتا

    RECITATIONS

    کیفی اعظمی

    کیفی اعظمی

    فہد حسین

    فہد حسین

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کیفی اعظمی

    دائرہ کیفی اعظمی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites