درختوں کے لیے

فاضل جمیلی

درختوں کے لیے

فاضل جمیلی

MORE BYفاضل جمیلی

    اے درختو! تمہیں جب کاٹ دیا جائے گا

    اور تم سوکھ کے لکڑی میں بدل جاؤ گے

    ایسے عالم میں بہت پیش کشیں ہوں گی تمہیں

    تم مگر اپنی روایت سے نہ پھرنا ہرگز

    شاہ کی کرسی میں ڈھلنے سے کہیں بہتر ہے

    کسی فٹپاتھ کے ہوٹل کا وہ ٹوٹا ہوا تختہ بننا

    میلے کپڑوں میں سہی لوگ محبت سے جہاں بیٹھتے ہیں

    کسی بندوق کا دستہ بھی نہیں ہونا تمہیں

    چاقو چھریوں کو بھی خدمات نہ اپنی دینا

    ایسے دروازے کی چوکھٹ بھی نہ بننا ہرگز

    جو محبت بھری دستک پہ کبھی کھل نہ سکے

    اے درختو! تمہیں جب کاٹ دیا جائے گا

    اور تم سوکھ کے لکڑی میں بدل جاؤ گے

    کوئی بیساکھی بنائے تو سہارا دینا

    اور کشتی کے لیے اتنی محبت سے تم آگے بڑھنا

    کہ سمندر کی فراخی بھی بہت کم پڑ جائے

    اپنے پتوار مرے بازوؤں جیسے رکھنا

    جو کسی اور کی طاقت کے سوا زندہ ہیں

    میری دنیا کہ ابھی واقف الفت ہی نہیں

    میرے بازو بھی محبت کے سوا زندہ ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فاضل جمیلی

    فاضل جمیلی

    RECITATIONS

    فاضل جمیلی

    فاضل جمیلی

    فاضل جمیلی

    درختوں کے لیے فاضل جمیلی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY