دشت بے اماں

خورشید اکبر

دشت بے اماں

خورشید اکبر

MORE BY خورشید اکبر

    تجھے یاد کرتے کرتے

    تری راہ تکتے تکتے

    مرے اجنبی مسافر

    کئی دن گزر گئے ہیں

    کوئی شام آ رہی ہے:

    کوئی خوش نما ستارہ جو فلک پہ ہنس رہا ہے کسی مہ جبیں کی صورت

    جو نظر کو ڈس رہا ہے

    وہی ایک استعارہ

    تری یاد رہ گزر پر مرا ہم سفر بنا ہے

    وہی اک ضیا سلامت

    سر شام تیرگی میں

    مرے کام آ رہی ہے

    مرے راستے کے آگے

    کسی رات کا گزر ہے

    کہیں وہم سر بہ سر ہے

    کہیں خوف کا اثر ہے

    کہیں سرسراہٹیں ہیں

    کہیں جھنجھناہٹیں ہیں

    نہیں دشت ہو میں آہو

    نہیں جنگلوں میں جگنو

    تری یاد وہ کھلونا جسے توڑ بھی نہ پاؤں

    کہیں چھوڑ بھی نہ پاؤں

    ابھی نصف شب ہے گزری

    تجھے یاد کر رہا ہوں ترے خواب دیکھتا ہوں

    یہی جسم ہے بچھونا اسی جاں کو اوڑھنا ہے

    ہوئی صبح در پہ دستک

    ترے خواب جا چکے ہیں

    تری یاد بھی ہے رخصت

    نئی آرزو کھڑی ہے

    نئے لوگ مل گئے ہیں

    مرے سامنے ہزاروں

    نئے کام آ پڑے ہیں

    اسی درمیاں تصور ترا بار بار آیا

    اسی راستے پہ جاناں

    کوئی شام پھر ہے آئی

    تری یاد نور پیکر

    تری قربتوں کا سایہ

    کہیں تیرگی میں گم ہے

    میں اذان دے رہا ہوں

    کسی دشت بے اماں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY