ڈھلان

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    ریت پر ثبت ہیں یہ کس کے قدم

    حسن کو نرم خرامی کی قسم

    سر ساحل مری تخئیل جواں گزری ہے

    یا کوئی انجمن گل بدناں گزری ہے

    موج نے نقش قدم چاٹ لیے

    میری تخئیل کے پر کاٹ لیے

    لوگ دریاؤں کے انجام سے ڈر جاتے ہیں

    اب تو رستے بھی سمندر میں اتر جاتے ہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ڈھلان نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY