دھند

MORE BYعلی اکبر عباس

    مسافروں سے کہو آسماں کو مت دیکھیں

    نہ کوئی ابر کا ٹکڑا

    نہ کوئی تار شفق

    گذشتہ شام کا اٹھا ہوا وہ گرد و غبار

    ابھی تلک ہیں فضائیں اسی سے آلودہ

    وہ ایک آگ کبھی زاد راہ تھی۔ اپنا

    جہاں قیام کیا تھا

    وہیں پہ چھوڑ آئے

    تو اہل قافلہ

    اب داستان گو سے کہو

    کوئی روایت کہنہ کوئی حکایت نو

    جو خوں کو سرد کرے

    اور سوچ بکھرا دے

    کہ ایسے وقت میں خاموشیاں تو ٹھیک نہیں

    مآخذ:

    • کتاب : Ber Aab e Neel (Pg. 129)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY