دھوپ چھانو کے درمیاں

ارشد کمال

دھوپ چھانو کے درمیاں

ارشد کمال

MORE BYارشد کمال

    یہ زندگی

    گلوں کی ایک سیج ہے

    نہ خار و خس کا ڈھیر ہے

    بس ایک امتحان کا

    لطیف سا سوال ہے

    سوال کا جواب تو محال ہے

    بس اتنا ہی سمجھ لیں ہم

    کہ زیست دھوپ چھانو ہے

    کہیں پہ یہ نشیب تو کہیں پہ یہ فراز ہے

    جہاں بٹھائے یہ ہمیں

    وہیں پہ ہم بساط ذات ڈال کر

    کرن کرن سے

    کچھ نہ کچھ حرارتیں نچوڑ لیں

    تمازتیں سمیٹ لیں کچھ اس طرح

    کہ چھانو کی عنایتوں بشارتوں

    کا اک یقیں بھی ساتھ ہو!

    مآخذ :
    • کتاب : dhoop ke pudey (Pg. 43)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY