دوراہے

MORE BYکفیل آزر امروہوی

    کب تلک خوابوں سے دھوکہ کھاؤ گی

    کب تلک اسکول کے بچوں سے دل بہلاؤ گی

    کب تلک منا سے شادی کے کرو گی تذکرے

    خواہشوں کی آگ میں جلتی رہو گی کب تلک

    چھٹیوں میں کب تلک ہر سال دلی جاؤ گی

    کب تلک شادی کے ہر پیغام کو ٹھکراؤ گی

    چائے میں پڑتا رہے گا اور کتنے دن نمک

    بند کمرے میں پڑھو گی اور کتنے دن خطوط

    یہ اداسی کب تلک

    کب تلک نظمیں لکھو گی

    رؤو گی یوں رات کی خاموشیوں میں کب تلک

    بائبل میں کب تلک ڈھونڈو گی زخموں کا علاج

    مسکراہٹ میں چھپاؤ گی کہاں تک اپنے غم

    کب تلک پوچھو گی ٹیلیفون پر میرا مزاج

    فیصلہ کر لو کہ کس رستے پہ چلنا ہے تمہیں

    میری بانہوں میں سمٹنا ہے ہمیشہ کے لیے

    یا ہمیشہ درد کے شعلوں میں جلنا ہے تمہیں

    کب تلک خوابوں سے دھوکے کھاؤ گی

    مآخذ:

    • کتاب : Dhoop Ka Dareecha (Pg. 107)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY