ایسٹ انڈیا کمپنی کے فرزندوں سے خطاب

جوشؔ ملیح آبادی

ایسٹ انڈیا کمپنی کے فرزندوں سے خطاب

جوشؔ ملیح آبادی

MORE BYجوشؔ ملیح آبادی

    کس زباں سے کہہ رہے ہو آج تم سوداگرو

    دہر میں انسانیت کے نام کو اونچا کرو

    جس کو سب کہتے ہیں ہٹلر بھیڑیا ہے بھیڑیا

    بھیڑیے کو مار دو گولی پئے امن و بقا

    باغ انسانی میں چلنے ہی پہ ہے باد خزاں

    آدمیت لے رہی ہے ہچکیوں پر ہچکیاں

    ہاتھ ہے ہٹلر کا رخش خود سری کی باگ پر

    تیغ کا پانی چھڑک دو جرمنی کی آگ پر

    سخت حیراں ہوں کہ محفل میں تمہاری اور یہ ذکر

    نوع انسانی کے مستقبل کی اب کرتے ہو فکر

    جب یہاں آئے تھے تم سوداگری کے واسطے

    نوع انسانی کے مستقبل سے کیا واقف نہ تھے

    ہندیوں کے جسم میں کیا روح آزادی نہ تھی

    سچ بتاؤ کیا وہ انسانوں کی آبادی نہ تھی

    اپنے ظلم بے نہایت کا فسانہ یاد ہے

    کمپنی کا پھر وہ دور مجرمانہ یاد ہے

    لوٹتے پھرتے تھے جب تم کارواں در کارواں

    سر برہنہ پھر رہی تھی دولت ہندوستاں

    دست کاروں کے انگوٹھے کاٹتے پھرتے تھے تم

    سرد لاشوں سے گڈھوں کو پاٹتے پھرتے تھے تم

    صنعت ہندوستاں پر موت تھی چھائی ہوئی

    موت بھی کیسی تمہارے ہات کی لائی ہوئی

    اللہ اللہ کس قدر انصاف کے طالب ہو آج

    میر جعفرؔ کی قسم کیا دشمن حق تھا سراجؔ

    کیا اودھ کی بیگموں کا بھی ستانا یاد ہے

    یاد ہے جھانسی کی رانی کا زمانہ یاد ہے

    ہجرت سلطان دہلی کا سماں بھی یاد ہے

    شیر دل ٹیپوؔ کی خونیں داستاں بھی یاد ہے

    تیسرے فاقے میں اک گرتے ہوئے کو تھامنے

    کس کے تم لائے تھے سر شاہ ظفر کے سامنے

    یاد تو ہوگی وہ مٹیا برج کی بھی داستاں

    اب بھی جس کی خاک سے اٹھتا ہے رہ رہ کر دھواں

    تم نے قیصر باغ کو دیکھا تو ہوگا بارہا

    آج بھی آتی ہے جس سے ہائے اخترؔ کی صدا

    سچ کہو کیا حافظے میں ہے وہ ظلم بے پناہ

    آج تک رنگون میں اک قبر ہے جس کی گواہ

    ذہن میں ہوگا یہ تازہ ہندیوں کا داغ بھی

    یاد تو ہوگا تمہیں جلیانوالا باغ بھی

    پوچھ لو اس سے تمہارا نام کیوں تابندہ ہے

    ڈائرؔ گرگ دہن آلود اب بھی زندہ ہے

    وہ بھگتؔ سنگھ اب بھی جس کے غم میں دل ناشاد ہے

    اس کی گردن میں جو ڈالا تھا وہ پھندا یاد ہے

    اہل آزادی رہا کرتے تھے کس ہنجار سے

    پوچھ لو یہ قید خانوں کے در و دیوار سے

    اب بھی ہے محفوظ جس پر طنطنہ سرکار کا

    آج بھی گونجی ہوئی ہے جن میں کوڑوں کی صدا

    آج کشتی امن کے امواج پر کھیتے ہو کیوں

    سخت حیراں ہوں کہ اب تم درس حق دیتے ہو کیوں

    اہل قوت دام حق میں تو کبھی آتے نہیں

    ''بینکی'' اخلاق کو خطرے میں بھی لاتے نہیں

    لیکن آج اخلاق کی تلقین فرماتے ہو تم

    ہو نہ ہو اپنے میں اب قوت نہیں پاتے ہو تم

    اہل حق روشن نظر ہیں اہل باطن کور ہیں

    یہ تو ہیں اقوال ان قوموں کے جو کمزور ہیں

    آج شاید منزل قوت میں تم رہتے نہیں

    جس کی لاٹھی اس کی بھینس اب کس لئے کہتے نہیں

    کیا کہا انصاف ہے انساں کا فرض اولیں

    کیا فساد و ظلم کا اب تم میں کس باقی نہیں

    دیر سے بیٹھے ہو نخل راستی کی چھاؤں میں

    کیا خدا ناکردہ کچھ موچ آ گئی ہے پاؤں میں

    گونج ٹاپوں کی نہ آبادی نہ ویرانے میں ہے

    خیر تو ہے اسپ تازی کیا شفا خانے میں ہے

    آج کل تو ہر نظر میں رحم کا انداز ہے

    کچھ طبیعت کیا نصیب دشمناں ناساز ہے

    سانس کیا اکھڑی کہ حق کے نام پر مرنے لگے

    نوع انساں کی ہوا خواہی کا دم بھرنے لگے

    ظلم بھولے راگنی انصاف کی گانے لگے

    لگ گئی ہے آگ کیا گھر میں کہ چلانے لگے

    مجرموں کے واسطے زیبا نہیں یہ شور و شین

    کل یزیدؔ و شمرؔ تھے اور آج بنتے ہو حسینؔ

    خیر اے سوداگرو اب ہے تو بس اس بات میں

    وقت کے فرمان کے آگے جھکا دو گردنیں

    اک کہانی وقت لکھے گا نئے مضمون کی

    جس کی سرخی کو ضرورت ہے تمہارے خون کی

    وقت کا فرمان اپنا رخ بدل سکتا نہیں

    موت ٹل سکتی ہے اب فرمان ٹل سکتا نہیں

    مآخذ
    • کتاب : Urdu Mein Qaumi Shairi Ke Sau Saal (Pg. 351)
    • Author : Ali Jawad Zaidi
    • مطبع : Uttar Pradesh Urdu Acadmi (Lucknow) (1982,Editon II 2010)
    • اشاعت : 1982,Editon II 2010

    موضوعات:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY