عید کی اچکن

سید محمد جعفری

عید کی اچکن

سید محمد جعفری

MORE BYسید محمد جعفری

    سجتی تھی کبھی تن پہ جو تھی عید کی اچکن

    سجتے تھے کبھی ہم، تو کبھی عید کی اچکن

    سو سو طرح پروان چڑھی عید کی اچکن

    اب اتنے گھٹے ہم کہ بڑھی عید کی اچکن

    اچکن نہیں اس وقت عبا اور قبا ہے

    یا کوئی دوشالہ ہے جو کھونٹی پہ ٹنگا ہے

    اس عید کی اچکن نے مچائی تھی بڑی دھوم

    جب اس کو پہنتے تو چمک اٹھتا تھا مقسوم

    جاتے جو کہیں دور سے ہو جاتا تھا معلوم

    ہم اس میں نظر آتے تھے جیسے کہ ہوں معصوم

    اس عید کی اچکن میں بڑے لعل جڑے تھے

    عیدی بھی ہمیں دیتے تھے جو ہم سے بڑے تھے

    اس عہد میں یہ عید کی اچکن تھی بنائی

    جس عہد میں ہم کھاتے تھے بابا کی کمائی

    دیتے نہ تھے افلاس کی اس وقت دہائی

    مل جاتی تھی جس شے کی ضرورت نظر آئی

    ہر بات پہ جب روٹھ کے ہنسنے کا مزہ تھا

    تب عید کی اچکن کے پہننے کا مزہ تھا

    اس عید کی اچکن کو پہن لیتے تھے جب ہم

    آتی تھی نظر ہیچ ہمیں سلطنت جم

    جس نے مجھے دیکھا وہ یہی کہتا تھا ہر دم

    ''جب تک کہ نہ دیکھا تھا قد یار کا عالم''

    ''میں معتقد فتنۂ محشر نہ ہوا تھا''

    میں بھی غم دنیا کا شناور نہ ہوا تھا

    اس عید کی اچکن نے گلے ان سے ملایا

    گھبراتا تھا پاس آنے سے جن لوگوں کا سایہ

    کس کس کے نہ جانے بت پندار کو ڈھایا

    جب عید کا دن آیا تو پھر دل کو سجایا

    اچکن نہیں ماضی کا سنہرا سا ورق ہے

    ہم بدلے پر اچکن نہیں بدلی یہ قلق ہے

    اے جعفریؔ اچکن کو نہ لٹکا مرے آگے

    ''جز وہم نہیں ہستیٔ اشیا مرے آگے''

    وہ دھوپ ڈھلی رہ گیا سایا مرے آگے

    اب قصۂ ماضی کو نہ دہرا مرے آگے

    کام آئی یہ اچکن نہ غریب الوطنی میں

    ''ہر چند سبک دست ہوئے بت شکنی میں''

    مآخذ:

    • کتاب : Teer-e-Neem Kash (Pg. 44)
    • Author : Sayed Mohammad Jafri
    • مطبع : Sang-e-Meel Publications, Lahore (P.k.) (2007)
    • اشاعت : 2007

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY