ایک احساس

اختر الایمان

ایک احساس

اختر الایمان

MORE BY اختر الایمان

    غنودگی سی رہی طاری عمر بھر ہم پر

    یہ آرزو ہی رہی تھوڑی دیر سو لیتے

    خلش ملی ہے مجھے اور کچھ نہیں اب تک

    ترے خیال سے اے کاش درد دھو لیتے

    مرے عزیزو مرے دوستو گواہ رہو

    برہ کی رات کٹی آمد سحر نہ ہوئی

    شکستہ پا ہی سہی ہم سفر رہا پھر بھی

    امید ٹوٹی کئی بار منتشر نہ ہوئی

    ہیولیٰ کیسے بدلتا ہے وقت حیراں ہوں

    فریب اور نہ کھائے نگاہ ڈرتا ہوں

    یہ زندگی بھی کوئی زندگی ہے پل پل میں

    ہزار بار سنبھلتا ہوں اور مرتا ہوں

    وہ لوگ جن کو مسافر نواز کہتے تھے

    کہاں گئے کہ یہاں اجنبی ہیں ساتھی بھی

    وہ سایہ دار شجر جو سنا تھا راہ میں ہیں

    سب آندھیوں نے گرا ڈالے اب کہاں جائیں

    یہ بوجھ اور نہیں اٹھتا کچھ سبیل کرو

    چلو ہنسیں گے کہیں بیٹھ کر زمانے پر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ایک احساس نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY